اقوام متحدہ کے انسانی حقوق

تمہید

چونکہ ہر انسان کی ذاتی عزت اور ھرمت اور انسانوں کے مساوی اور ناقابل انتقال حقوق کو تسلیم کرنا دنیا میں آزادی، انصاف اور امن کی بنیاد ہے، چونکہ انسانی حقوق سے لاپرواہی اور ان کی بے ھرمتی اکثر ایسے وحشیانہ افعال کی شکل
میں ظاہر ہوئئ ہے جن سے انسانیت کے ذمیر کو سخت صدمے پہنچے ہیں اور عام انسانوں کو بلند ترین آرزو یہ رہی ہے کہ ایسی دنیا وجود میں آئے جس میں تمام انسانوں کو اپنی بات کہنے اور اپنے عقیدے پر قائم رہنے کی کی آزادی حاصل
ہو اور خوف اور احتیاج سے محفوظ رہیں، چونکہ یہ بہت ضروری ہے کہ انسانی حقوق کو قانون کی عملداری کے ذریعے محفوظ رکھا جا ئے۔ احر ہم یہ نہیں چاہتے کہ انسان عاجز آ کر جبر اور استبداد کے خلاف بغاوت کرنے پر مجبور ہوں،
چونکہ یہ ضروری ہے کہ قوموں کے درمیان دوستانہ تعلقات کو بڑحایا جائے،
چونکہ اقوام متحدہ کے عوام نے چارٹر میں بنیادی انسانی حقوق، انسانی وقار اور قدر اور مرد اور خواتین کے مساوی حقوق پر اپنے اعتماد کی توثیق کی ہے اور معاشرتی ترقی اور زندگی کے بہتر معیار کو فروغ دینے کا عزم کیا ہے۔
چونکہ ممبر ممالک نے اقوام متحدہ کے تعاون سے، انسانی حقوق اور بنیادی آزادیوںکے لئے عالمی احترام اور ان کے مشاہدے کے حصولکے لئے اپنے آپ سے وعدہ کیا ہے۔
جبکہ اس عہد کے مکمل تکمیلکے لئے ان حقوق اور آزادیوں کے بارے میں مشترکہ تفہیم سب سے زیادہ اہمیت کا حامل ہے،

Now, Therefore THE GENERAL ASSEMBLY proclaims THIS UNIVERSAL DECLARATION OF HUMAN RIGHTS